Wednesday, 21 October 2015

Chairman APHC Syed Ali Shah Geelani arrested today

Chairman APHC Syed Ali Shah Geelani was arrested today by police today while he came out of his residence to visit Batengoo Islamabad, Kashmir to attend a condolence meeting of Shaheed Zahid Rasool, organised by APHC.

Chairman APHC Syed Ali Shah Geelani arrested by police today

Chairman APHC Syed Ali Shah Geelani was arrested by police today while he came out of his residence to visit Batengoo Islamabad, Kashmir to attend a condolence meeting of Shaheed Zahid Rasool, organised by APHC.

Sunday, 18 October 2015

One of the two truckers attacked with petrol bombs in Udhampur by Hindu Terrorists succumbs today at a Hospital in New Delhi

#Kashmir on high tense: One of the two truckers attacked with petrol bombs in Udhampur by Hindu Terrorists succumbs today at a Hospital in New Delhi" #HumanRights #UN70 #BeefBan

کشمیر میں کشیدگی: اودھمپورمیں ہندو دہشتگردوں کی طرف سے پیٹرول بم حملہ میں دو ٹرک ڈرائیوروں میں سے ایک زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا

Wednesday, 14 October 2015

Two Kashmiri truckers from Islamabad, Kashmir injured in petrol bomb attack at Udhampur, Jammu by Hindu terrorists

Two Kashmiri truckers from Islamabad, Kashmir injured in petrol bomb attack at Udhampur, Jammu by Hindu terrorists are undergoing treatment in the Intensive Care Unit (ICU) at Safdarjung Hospital , New Delhi. Injured Showkat Ahmad Dar of Uranhall, Islamabad and Zahid Ahmad Bhat of Botengoo, Islamabad. Kashmir observed complete strike on Monday Oct 12 against the attack on truckers.

Monday, 5 October 2015

Most of the Jails in Jammu and Kashmir Overcrowded

Most of the Jails in Jammu and Kashmir Overcrowded

Most of the Jails in Jammu and Kashmir Overcrowded

Representational Image

SRINAGAR: Most of the jails in Jammu and Kashmir are overcrowded, so the state government was taking steps, including construction of new central jail in Srinagar, to address the issue.

The total number of jails in the state at present is 14, out of which nine have the inmate position on the higher side, Minister In-charge Home said in a written reply to a question raised by National Conference (NC) MLC Bashir Ahmad Veeri.

Compared to the total capacity of 3011 in these 14 prisons, 2406 prisoners are in jails. However, some of the prisons have the inmate position much above their original capacity, the reply said.

Though the central jails at Jammu and Srinagar have the capacity of 920 and 360 respectively, the number of prisoners lodged, as on September 30 this year, is on the lower side at 311 and 329 respectively.

However, most of the district jails are overcrowded with District Jail in south Kashmir's Anantnag having more than double the occupancy at 158 compared to the capacity of 60.

Similarly, district jail Jammu has the capacity of 450, while its occupancy is 522, and Baramulla jail 158 against 120, the official data suggests.

The government said it is taking steps to address the issue of overcrowding in the jails.

The Prisons Department has identified 200 kanals of land belonging to Agriculture Department at Zawoora Zewan in Srinagar for the construction of new Central Jail Srinagar, the government said.

It, however, said the records of the Prison Headquarters relating to the subject were washed away in the floods last year.

In view of this, the department has again requested the Divisional Commissioner Kashmir to furnish the relevant records for processing the case further, the minister incharge Home said.

He also said the major construction work of the new district jail in Pulwama has been completed except minor renovation works of some structure which could not be taken up due to occupation of the premises by an army unit earlier.

He said DGP has been advised to effect necessary deployment of a company of either CRPF or SSB for the security of the jail so that it is operationalized and the issue of overcrowding of inmates in other jails is addressed.
Story First Published: October 05, 2015

Sunday, 4 October 2015

After Geelani, who?

After Geelani, who?

Many consider Ashraf Sehrai to be the likely successor.

| 5-minute read | 04-10-2015
  • 144
    Total Shares

The thorn in India's side in Kashmir has been Syed Ali Shah Geelani, the de facto leader of young Kashmir. Geelani has not been keeping well for two years, and talks of his succession are in the air. To fit his shoes would be a tough job. The riddle for his party is: After Geelani, who?

Some of the men in Geelani's inner circle have been in the limelight. Some are little known to the outside world. Among them is his trusted aide, Mohammad Ashraf Ali, whose nom de plume is Ashraf Sehrai. His significance can be judged from the fact that many consider him the likely successor of Geelani.

Sehrai, the son of Shamas-ud-din Khan, was born in 1944 in Tickipora Lolab, Kupwara. His forefathers had migrated to this part of Kashmir much before Partition. Sehrai's family is linked to the Khans of Pakistan.

Sehrai studied in Tickipora till primary level, before moving on to Sogam High school for further studies. He passed his matriculation examination in 1959.

Sehrai recalls that he was a bright, intelligent but shy student who took great interest in debates and discussions on religious and political discourses. He was given wazifa (scholarship) in class ten given his intellect and command over Persian, Arabic and Urdu languages.

He did BA (Hons) in Urdu from Aligarh Muslim University (AMU). Sehrai also has the prestigious Urdu degrees of Aadebe Mahir and Aadebe Kamil.

Like many other Kashmiris, Sehrai fondly recalls that he was taught by Kashmiri pandit teachers. One of his childhood teachers was Gopi Nath Kaul, who taught him English. Sehrai holds him in high regard and still remembers how he taught him like his own child.

His two brothers, who were politically and religiously active, were one of the early Rukuns (basic member) of the Jamaat. To be a Rukun of the Jamaat is not easy, as one has to go through various levels of Islamic ritual.By now, the Jamaat had made a base in Tickipora. The man who took the Jamaat to far-flung areas was the old-school Geelani.

Young Geelani was made the Jamaat's Baramulla district president. He used to visit Tickipora frequently, and it was during these visits that he met Sehrai. Sehrai was impressed by Geelani's hold on the Quran and Hadees (sayings of Prophet Muhammad). Sehrai was also impressed by Geelani's command on Maulana Abul Ala Maududi's literature. He was also enthused by Geelani's sinewy speeches.

Sehrai now fondly recalls that Geelani used to lovingly call him Ashlala.

Sehrai finished class ten when he was 17. By this time, Geelani was 30-years-old, and Halqiy-e-Sopore (Sopore's base of the Jamaat). He was in dire need of young blood for the party. Sehrai's elder brother motivated him to join Geelani.

By this time, Sehrai had developed a keen interest in the writings of Maududi. For understanding Maududi better, Geelani was the best teacher Sehrai could have asked for.

He joined Geelani in 1959 – and has stayed with him since. He says now, "I am a shadow of Geelani right from 1959. I have never gone to my home with the intention of not coming back. He is my Rehbar (leader) and I am his follower."

Sehrai continues to be a lover of literature and poetry, but is not engaged in writing anymore because of his political engagements. Most of his writings and poems were published by Jamaat's Azaan andTulu magazines.

In 1965, when he was 22-years-old, Sehrai was jailed for the first time for "anti-government activities". He was imprisoned in Srinagar Central Jail for about six months.

In jail, he started reading Kounsar Niyazi's work Zaree Gul. He narrates an interesting story about how his name changed from Ashraf Ali to Ashraf Sehrai. He says laughing, "Geelani Sahab, Shah Wali Mohammad of Seelu, Sopore and I were lodged in Srinagar Central Jail. After reading Niyazi's work, I wrote 'Sehrai' (floater). At this (sic) young age, I was thinking that what I am doing in a jail. I was also missing my parents and my home. That is why the word 'Sehrai' came to my mind. Shah Wali saw the name and exclaimed 'Sehrai' and showed it to Geelani Sahab. From then onwards I became Mohammad Ashraf Sehrai."

Sehrai calls Geelani his Rehbar and also his brother. "I have never tried to compete with him. I cannot even think of competing with him," he says.

Their strongest bond is the Kashmir movement. It has kept them together for 56 years. Their ideological bond continues to thrive and attracts the youth of Kashmir to both of them. Sehrai says ideology is the base of any movement.

In his views, the recent failure of talks between the two nuclear states - India and Pakistan - happened because the Kashmiris (the primary party to the dispute) were not included in the dialogue process. He also is a firm believer of intervention by a third party, like the United Nations or a neutral country - in the Kashmir dispute.

Sehrai was one of the key Hurriyat leaders during the 2010 unrest in Kashmir. Many in Kashmir now think that the agitation in 2010 gave them nothing. But Sehrai views the failure of 2010 differently. He says, "There were some strategic mistakes on the part of the leadership like (sic) we gave long strike calls which disillusioned certain sections of Kashmir. I must say that 2010 was a collective failure for Kashmir."

The other two main contenders in the Tehreek-e-Hurriyat to succeed Geelani are the hardcore Mohammad Qasim Faktoo (Asiya Andrabi's husband) and the showstopper Masarat Alam Bhat. Both of them are in jail, and may not be released soon. Many activists and cadre in the Tehreek-e-Hurriyat believe that Sehrai is a capable man, holds command and has a say among the masses. Since the other leaders are languishing in jail, he may be the likely successor of Geelani.But Sehrai says that if he ever has to succeed Geelani, it will be Gunah-e-Be' lazath (Sin without a benefit) for him.

As a shy man, Sehrai has always avoided the limelight. This is why he is largely unknown in the glaring eye of the media and the public.

Thursday, 1 October 2015

وزیراعظم نوازشریف کا اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 70 ویں اجلاس سے خطاب

وزیراعظم نوازشریف کا اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 70 ویں اجلاس سے خطاب

وزیراعظم محمد نوازشریف نے دیرینہ تنازعہ کشمیر کے حل کی فوری ضرورت پر زور دیتے ہوئے پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی کے بنیادی اسباب دور کرنے کیلئے بھارت کے ساتھ چار نکاتی امن اقدام تجویز کیا ہے جبکہ بھارت پر زور دیا ہے کہ وہ پاکستان میں عدم استحکام پیدا کرنے سے گریز کرے۔

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 70 ویں اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم محمد نوازشریف نے کہا کہ دانشمندی کا تقاضا ہے کہ ہمارا قریبی ہمسایہ پاکستان میں عدم استحکام پیدا کرنے سے اجتناب کرے۔ دونوں ممالک کو کشیدگی کے اسباب پر توجہ دینا اور انہیں حل کرنا چاہئے اور مزید کشیدگی سے بچنے کیلئے ہر ممکنہ اقدامات اٹھانے چاہئیں۔ وزیراعظم نے 193 رکنی جنرل اسمبلی کے 70 ویں اجلاس میں شریک عالمی رہنمائوں کے روبرو اپنے خطاب میں پاکستان اور بھارت کے درمیان تنازعہ کشمیر اور کشیدہ صورتحال کے علاوہ افغانستان، دہشت گردی، فلسطین، سلامتی کونسل اصلاحات، موسمیاتی تبدیلی، اقوام متحدہ قیام امن کوششوں، بعداز2015ئ، پائیدار ترقیاتی ایجنڈے اور جنوب جنوب تعاون سمیت وسیع تر امور کا احاطہ کیا۔

وزیراعظم نے کہاکہ مسلمان دنیا بھر میں مصائب کا شکار ہیں، فلسطینی اور کشمیری غیر ملکی تسلط میں ظلم کا سامنا کر رہے ہیں، اقلیتوں پر ستم ڈھائے جا رہے ہیں اور مسلم پناہ گزینوں کیخلاف امتیازی کارروائیاں کی جا رہی ہیں ۔ بین الاقوامی برادری کو مسلم عوام کیخلاف ناانصافیوں کا ازالہ کرنا چاہئے۔ آج اس موقع پربھارت کے ساتھ ایک نیا امن اقدام تجویز کر رہاہوں جس کا آغاز ایسے اقدامات سے کیا جائے جن پر عمل کرنا آسان ترین ہے۔ انہوں نے تجویز کیا کہ پاکستان اور بھارت کشمیر میں لائن آف کنٹرول پر مکمل سیز فائر کیلئے 2003ء کی مفاہمت (انڈر سٹینڈنگ) کو باضابطہ بنائیں اور اس کا احترام کریں۔ اس مقصد کیلئے ہم سیز فائر کی پابندی کی نگرانی کیلئے یو این ایم او جی آئی پی کی توسیع پر زور دیتے ہیں۔ ہم تجویز کرتے ہیں کہ پاکستان اور بھارت اس امر کا اعادہ کریں کہ وہ کسی بھی حالت میں طاقت کا استعمال یا اس کے استعمال کی دھمکی نہیں دینگے۔ یہ اقوام متحدہ چارٹر کا مرکزی عنصر ہے۔ کشمیر سے فوج کے انخلاء کیلئے اقدامات اٹھائے جائیں۔ دنیا کے بلند ترین میدان جنگ سیاچن گلیشیئر سے غیر مشروط باہمی انخلاء پر اتفاق کیا جائے۔ وزیراعظم نے تنازع کشمیر پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ کشمیری، جو تنازع کا لازمی فریق ہیں، کے ساتھ مشاورت پرامن حل تلاش کرنے کیلئے ناگزیر ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ترقی میری حکومت کی اولین ترجیح اورپرامن ہمسائیگی کی تشکیل میری پالیسی کا محور ہے۔ ہمارے عوام کو خوشحالی کیلئے امن کی ضرورت ہے، امن لاتعلقی سے نہیں بات چیت کے ذریعے حاصل کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 1997ء میں جب بھارت کے ساتھ جامع مذاکرات کا آغاز ہوا تو دونوں ممالک نے اتفاق کیا کہ یہ دو بڑے اجزاء کشمیر اور امن و سلامتی کے ساتھ دہشت گردی سمیت دیگر 6 ایشوز پر محیط ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ ان دو ایشوز کو حل کرنے کی بنیادی اور فوری ضرورت آج پہلے سے کہیں بڑھ کر ہے۔ انہوں نے کہا کہ 1947ء کے بعد سے کشمیر تصفیہ طلب تنازعہ رہا ہے۔ اقوام متحدہ سلامتی کونسل کی قراردادوں پر عمل نہیں کیا گیا ہے۔ کشمیریوں کی تین نسلوں نے صرف ٹوٹے ہوئے وعدے اور وحشیانہ ظلم دیکھا ہے۔ ایک لاکھ سے زائد کشمیری حق خودارادیت کی اپنی جدوجہد میں جانوں کا نذرانہ پیش کر چکے ہیں، یہ اقوام متحدہ کی سب سے دیرینہ ناکامی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب میں نے جون 2013ء میں تیسری مرتبہ وزیراعظم پاکستان کا منصب سنبھالا تو میری اولین ترجیحات میں سے ایک بھارت کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانا تھا، میں اس بات پر زور دینے کیلئے بھارتی قیادت کے پاس پہنچا کہ ہمارا مشترکہ دشمن غربت اور پسماندگی ہے۔ محاذ آرائی نہیں بلکہ تعاون کو ہمارے تعلقات کو متعین کرنا چاہئے۔ آج بھی لائن آف کنٹرول اور ورکنگ بائونڈری پر سیز فائر کی خلاف ورزیاں زور پکڑ رہی ہیں جس سے خواتین اور بچوں سمیت شہریوں کی اموات واقع ہو رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی کے اسباب کو دور کیا جانا چاہئے، ایسی امن کوششوں کے ذریعے خطرے کا تاثر دور ہونے سے پاکستان اور بھارت کیلئے ممکن ہو سکے گا کہ وہ جارحانہ اور جدید اسلحہ نظام سے لاحق خطرے سے نمٹنے کیلئے وسیع تر اقدامات پر اتفاق رائے قائم کریں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان جنوبی ایشیا میں نہ تو اسلحہ کی دوڑ کا خواہاں ہے اور نہ ہی اس میں شریک ہے۔ تاہم ہم اپنے خطے میں ابھرتی ہوئی سیکیورٹی حرکات اور اسلحہ کے ذخائر سے غافل نہیں رہ سکتے جو ہمیں اپنی سلامتی برقرار رکھنے کیلئے ضروری اقدامات اٹھانے پر مجبور کرتے ہیں۔ وزیراعظم محمد نوازشریف نے کہا کہ ایک ذمہ دار جوہری ریاست کی حیثیت سے پاکستان جوہری تخفیف اسلحہ اور عدم پھیلائو کے مقصد کی حمایت جاری رکھے گا، ہم نے جوہری سلامتی کے اعلیٰ ترین معیارات کو برقرار رکھا ہے اور جوہری سہولیات اور ذخائر کے تحفظ اور سلامتی کو یقینی بنانے کیلئے موثر نظام قائم کر رکھا ہے۔ جنوبی ایشیا کو سٹرٹیجک استحکام کی ضرورت ہے اور اس کیلئے جوہری ضبط و تحمل، روایتی توازن اور تنازعات کے حل کیلئے سنجیدہ بات چیت کی ضرورت ہے۔ ہم جنوبی ایشیا میں امن اور خوشحالی کے تابناک دور کی تشکیل کیلئے اپنا کردار ادا کرنے کے خواہاں ہیں، یہ ہمارے اوپر ہمارے عوام اور آنے والی نسلوں کی طرف سے ایک ذمہ داری ہے۔

افغانستان کے بارے میں وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان اور افغانستان کے تعلقات میں کابل میں قومی یکجہتی حکومت کے آغاز کے بعد مثبت تبدیلی آئی ہے۔ افغان حکومت کی درخواست پر اور بین الاقوامی برادری کی حمایت سے پاکستان نے افغان مصالحت کے عمل میں سہولت دینے کیلئے سرتوڑ کوششیں کیں۔ افغان حکومت اور طالبان کے درمیان مذاکرات کا آغاز ہوا جو ایک بے مثال پہل قدمی تھی لیکن یہ امر افسوسناک ہے کہ بعض پیش ہائے رفت نے اس عمل میں رکاوٹ پیدا کی، بعد ازاں شدت پسندوں کے حملوں میں تیزی آئی جس کی ہم دو ٹوک مذمت کرتے ہیں ۔ پاکستان مذاکراتی عمل کی بحالی اور افغانستان میں امن و استحکام کے فروغ میں مدد کیلئے اپنی کوششیں جاری رکھے گا تاہم ہم اسی صورت میں ایسا کر سکتے ہیں اگر ہمیں افغان حکومت سے مطلوبہ تعاون حاصل ہو، افغانستان اور پاکستان کے درمیان تنائو، ان میں سے کسی ایک کے مفاد میں نہیں ہے۔ ہمیں حوصلہ ملا ہے کہ بڑی طاقتوں سمیت بین الاقوامی برادری افغانستان میں امن کے عمل کے تسلسل کی خواہاں ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان افغانستان اور ہمارے خطے میں امن اور خوشحالی کے فروغ میں چین کے فعال کردار کو سراہتا ہے، ہم ''ایک پٹی، ایک شاہراہ'' کے چین کے وژن کا خیر مقدم کرتے ہیں۔ چین کے صدر شی چن پنگ کے اس سال کے آغاز میں پاکستان کے دورے کے دوران اعلان کردہ پاک چین اقتصادی راہداری سے علاقائی ہم آہنگی کو فروغ ملے گا اور پورے خطے اور اس سے باہر خوشحالی آئے گی، یہ جنوب جنوب تعاون کی ایک متاثر کن مثال ہے جس کی پیروی کی جانی چاہئے۔ وزیراعظم نوازشریف نے کہا کہ ہم ایشیائی تعاون پر روس کی وسیع تر توجہ کا بھی خیر مقدم کرتے ہیں۔ شنگھائی تعاون تنظیم، جس میں پاکستان ایک مکمل رکن کی حیثیت سے اس سال شامل ہو گا، علاقائی رابطے کے فروغ کیلئے عظیم عزم کی حامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ جنوبی ایشیا مواقع کو کھو دینے کی تاریخ کا حامل ہے، اس کے خوفناک نتائج میں ہمارے علاقے میں غربت اور محرومی کا مسلسل موجود رہنا ہے۔

دہشت گردی کے حوالے سے وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان دہشت گردی کا بنیادی نشانہ ہے، ہم نے دہشت گردی کے باعث شہریوں اور سپاہیوں سمیت ہزاروں جانوں کا نذرانہ پیش کیا ہے، معصوم بچوں سمیت ہمارے بہنے والے خون نے ہمارے معاشرے سے اس لعنت کے خاتمے کے ہمارے عزم کو اور زیادہ تقویت دی ہے۔ ہم ہر قسم کی دہشت گردی سے لڑینگے، قطع نظر اس کے کہ اس کے سہولت کار کون ہیں ۔ ہمارا آپریشن ضرب عضب دہشت گردوں کیخلاف سب سے بڑی انسداد دہشت گردی مہم ہے جس میں ہماری ایک لاکھ 80 ہزار سے زائد سیکیورٹی فورسز شریک ہیں۔ اس نے دہشت گردوں کا ملک سے صفایا کرنے میں قابل ذکر پیش رفت کی ہے اور یہ آپریشن اس وقت ہی مکمل ہو گا جب ہمارا مقصد پایہ تکمیل تک پہنچے گا۔

انہوں نے کہا کہ اس آپریشن کو ہمہ جہت قومی لائحہ عمل کی معاونت حاصل ہے، یہ پرتشدد انتہا پسندی کے انسداد کیلئے پولیس اور سیکیورٹی اقدامات، سیاسی اور قانونی اقدامات اور سماجی و اقتصادی پالیسی پیکیجز کا احاطہ کرتا ہے ۔ دہشت گردی کے عالمی خطرے کو اس کے بنیادی اسباب کا ازالہ کئے بغیر شکست نہیں دی جا سکتی، غربت اور جہالت اس مسئلے کا حصہ ہیں، انتہا پسندانہ نظریات کی ضرور مخالفت ہونی چاہئے تاہم دنیا کے مختلف حصوں میں مسلمانوں کیخلاف ظلم اور ناانصافی کے متعدد واقعات کے منصفانہ حل کے ذریعے دہشت گردوں کے بیانیہ کا بھی انسداد کرنا ہو گا، بدقسمتی سے بعض دہشت گردی کیخلاف عالمی مہم کو مقبوضہ عوام کے حق خودارادیت کے جائز حق کو دبانے کیلئے استعمال کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

وزیراعظم محمد نوازشریف نے کہا کہ آج مشرق وسطیٰ میں دہشت گردی کا ابھرنا اور پھیلنا غیر معمولی سیکیورٹی چیلنجز کا حامل ہے۔ تشدد کی لہر، لسانی اور فرقہ وارانہ تنازعات اور داعش کے ابھرنے سے خطے کے کئی ممالک آج تصادم اور عدم استحکام کے گرداب میں ہیں جبکہ دیگر اس میں پھنستے جا رہے ہیں۔ فلسطین کا المیہ شدت اختیار کر گیا ہے، فلسطین اور اسرائیل کے درمیان امن کا قابل قبول راستہ، دو ریاستی حل، قابض قوت کے ہٹ دھرمی کے رویئے کی وجہ سے آج پہلے سے زیادہ دور ہوتا دکھائی دیتا ہے۔ وزیراعظم نے جنرل اسمبلی کی گزشتہ ماہ منظوری کے بعد اقوام متحدہ ہیڈ کوارٹر میں فلسطینی پرچم لہرانے کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جبکہ میں مخاطب ہوں اس ہال کے باہر قابل فخر فلسطینی پرچم لہرا رہا ہے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ یہ اس جانب پہلا قدم ہے، ہم اقوام متحدہ کے مکمل رکن کی حیثیت سے فلسطین کا خیر مقدم کرنے کے منتظر ہیں۔

سلامتی کونسل کے اصلاحات کے بارے میں انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کی 70 ویں سالگرہ کے موقع پر ہم سب کو درپیش موجودہ اور ابھرتے ہوئے چیلنجوں سے موثر طور پر نبردآزما ہونے کیلئے اس عالمی تنظیم کو مناسب طور پر ڈھالنے کی کوشش کرنی چاہئے۔ پاکستان سلامتی کونسل سمیت اقوام متحدہ کی جامع اصلاح کی حمایت کرتا ہے۔ ہمیں ایک ایسی سلامتی کونسل کی ضرورت ہے جو زیادہ جمہوری، نمائندہ، جوابدہ اور شفاف ہو، ایک ایسی کونسل جو خود مختاری، برابری کے اصولوں کے مطابق تمام رکن ممالک کے مفادات کی عکاس ہو، ایک ایسی کونسل نہیں جو طاقتور اور مراعات یافتہ کا توسیع شدہ کلب ہو۔ قیام امن اقوام متحدہ کی ایک کلیدی ذمہ داری رہی ہے ۔ پاکستان کو اس میں سب سے زیادہ حصہ لینے والے ملک کی حیثیت سے اپنے تاریخی اور موجودہ کردار پر فخر ہے، ہم بین الاقوامی امن اور سلامتی کی بالادستی کیلئے اسے اپنا فرض تصور کرتے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہم ایران اور پی 5 پلس ون کے درمیان طے پانے والے جامع جوہری معاہدے کا خیر مقدم کرتے ہیں۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ سفارتی رابطے اور کثیر الجہتی نظام سے مقصد حاصل کیا جا سکتا ہے، یہ ہمارے خطے اور اس سے باہر امن و سلامتی کیلئے نیک فال ہے۔ وزیراعظم نے پائیدار ترقیاتی اہداف کی تاریخی منظوری کے بارے میں کہا کہ حقیقی چیلنج اجتماعی سیاسی عزم اور وسائل کو حرکت میں لانا ہے تاکہ اس ایجنڈے پر جامع عملدرآمد کو یقینی بنایا جا سکے جس کی ہم نے پرعزم طور پر توثیق کی ہے۔ پاکستان بعداز 2015ء ترقیاتی ایجنڈے کے فروغ کیلئے قومی اہداف کے بارے میں عمل کا آغاز کر چکا ہے، ہم ان اہداف اور مقاصد کی نگرانی اور عملدرآمد کیلئے مضبوط نظام بھی تشکیل دے رہے ہیں۔ موسمیاتی تبدیلی سے لاحق خطرے کے بارے میں انہوں نے کہا کہ مشترکہ عزم کے راستے میں جانبدارانہ مفادات حائل نہیں ہونے چاہئیں تاکہ ہمارے کرہ ارض کو پہنچنے والے نقصانات کو روکا جا سکے۔

Watch Kashmiri being hanged while wearing a pheran

Watch Kashmiri being hanged while wearing a pheran


Srinagar/Brussels: A Kashmiri is being hanged while wearing a pheran will be a shocking scene to be watched on the screens. This shocking scene is part of the Kashmir related Bollywood movie "Chinar -Daastaan e Ishq" and is all set to be released in India on 16th October this month. The movie is based on the Urdu novel "Jheel Jalti hai" authored by noted Kashmiri writer Farooq Renzu Shah. The writer of the movie while talking to Kashmir Watch on phone said that the movie is based on the concept of love, and is revolving around Kashmir . The main character of the movie is 'Jamal' who is the hero and he is being hanged while wearing a "pheran".

This is first ever movie fully written by a Kashmiri author which is focusing the miseries of common people and also highlights the in-depth wounds inflicted on the people by anti-Kashmir and anti-Muslim establishments.

Recently Kashmir related movies have hit the Bollywood Box Office and earned lot of applause and business both in India, Pakistan and worldwide. The most recent hit movies on Kashmir were 'Haider' and 'Bhajrangi Bhaijan'. Both the movies highlighted problems faced by the Kashmiri people due to the armed conflict and largest Indian military deployment.